امریکی شہری نے ریکارڈ 232000 ڈالر کا پرمٹ حاصل کر کے چترال میں مارخور کا شکار کر لیا

امریکی ڈیرون جیمز مل مین مارخور کے شکار کے ساتھ۔ - رپورٹر کے ذریعہ فراہم کردہ
امریکی ڈیرون جیمز مل مین مارخور کے شکار کے ساتھ۔ – رپورٹر کے ذریعہ فراہم کردہ

پشاور: ایک امریکی شہری نے اتوار کو ضلع لوئر چترال کی توشی شاشا کنزروینسی میں شاندار مارخور کا شکار کیا۔ جیو نیوز.

امریکی شہری ڈیرون جیمز مل مین کو محکمہ جنگلی حیات سے 232,000 ڈالر میں ٹرافی ہنٹنگ کا اجازت نامہ ملا، یہ تاریخ کی سب سے بڑی بولی ہے۔

ذرائع نے مزید کہا کہ مارخور کے شکار کے لیے اجازت نامہ اکتوبر میں حاصل کیا گیا تھا جو کہ وسطی ایشیا میں مون سون کے جنگلات میں رہنے والا جنگلی بکرا ہے۔

محکمہ جنگلی حیات کا کہنا ہے کہ پہاڑی بادشاہ کے سینگ کا سائز 45 انچ تھا۔

گزشتہ سال اکتوبر میں، ملک کے انتہائی شمالی علاقے میں محکمہ جنگلی حیات نے ٹرافی اسکیم کے تحت استور مارخور کے شکار کے اجازت نامے ریکارڈ قیمتوں پر نیلام کیے تھے۔

ہر سال مختلف علاقوں کے لیے شکار کے اجازت نامے جاری کیے جاتے ہیں، جن میں گلگت بلتستان، ضلع چترال میں توشی کنزروینسی، ضلع چترال میں گرہیت کنزروینسی اور ضلع کوہستان میں کائیگاہ کنزروینسی شامل ہیں۔

پچھلے سال استور مارخور کی متعلقہ نسل کے لیے سب سے زیادہ بولی 167,525 ڈالر تھی۔

مارخور کی آبادی بڑھنے کے ساتھ ہی ٹرافی ہنٹنگ کے تصور نے مثبت نتائج برآمد کیے ہیں۔

ٹرافی ہنٹنگ پروگرام کے تحت، مقامی کمیونٹیز لائسنس فیس کا 80 فیصد وصول کرتی ہیں اور باقی حکومت اپنے پاس رکھتی ہے۔ رقم مختلف ہوتی ہے کیونکہ لائسنس بولی لگانے کے عمل کے ذریعے جاری کیے جاتے ہیں۔

مزید یہ کہ صرف بوڑھے اور نر مارخور کو گولی ماری جاتی ہے اور ایسے جانوروں کو ان کے سینگوں، چال اور جسم کی ساخت سے پہچانا جا سکتا ہے۔ اس پروگرام کو پاکستان میں حیاتیاتی تنوع کے تحفظ میں ایک بڑی کامیابی قرار دیا گیا ہے۔

ٹرافی ہنٹنگ پروگرام کے ذریعے پیدا کی جانے والی ترغیبات نے متعلقہ کمیونٹیز کے درمیان نئے اخلاقی معیارات متعارف کرائے ہیں جو اب اپنے جنگلی کھیل کی نسلوں کو معاشی اثاثے کے طور پر تحفظ فراہم کرتے ہیں۔

پاکستان کے قومی جانور مارخور کو مقامی اور بین الاقوامی قوانین جیسے کہ خطرے سے دوچار نسلوں میں بین الاقوامی تجارت کے کنونشن (Cites) کے ذریعے تحفظ حاصل ہے۔

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Scroll to Top