اٹلس ہونڈا نے پاکستان میں اپنی پہلی EV موٹر سائیکل متعارف کرادی


Honda BENLY e کی ایک نامعلوم تصویر۔  - ہونڈا
Honda BENLY e کی ایک نامعلوم تصویر۔ – ہونڈا

Atlas Honda نے ملک میں ماحول دوست گاڑیوں کو فروغ دینے کے لیے کمپنی کی پہلی EV موٹرسائیکل ‘BENLY e’ لانچ کی ہے۔

تاہم، موٹرسائیکل بنانے والے بڑے اداروں میں سے ایک نے یہ واضح نہیں کیا کہ نئی لانچ کی جانے والی موٹر بائیک آخری صارفین کے لیے کب دستیاب ہوگی۔

منگل کو جاری ہونے والے ایک بیان میں، کمپنی نے کہا کہ یہ لانچ اٹلس ہونڈا کی شیخوپورہ فیکٹری میں اٹلس ہونڈا کے پاکستان میں آپریشن کے 60ویں سال کی یاد میں منعقدہ ایک تقریب میں ہوئی۔

اٹلس ہونڈا کے موٹرسائیکل اور پاور پراڈکٹس کے چیف آفیسر نوریاکی ایبے نے اس موقع پر کہا کہ ہونڈا بینلی ای کو ٹیسٹ مارکیٹنگ کے لیے پیش کیا جائے گا جبکہ مارکیٹ کے تاثرات کی بنیاد پر نئی مصنوعات پیش کی جائیں گی تاکہ معاشرے اور صارفین کو ہونڈا کی بہترین مصنوعات حاصل ہو سکیں۔ پیش کرنا ہے.

"ہونڈا کی مصنوعات پاکستان میں بہت سے لوگوں کی روزمرہ کی زندگی کا لازمی حصہ بن چکی ہیں،” آبے نے مزید کہا کہ اٹلس گروپ اور ہونڈا موٹر کمپنی کے درمیان مشترکہ منصوبہ 1963 سے موٹرسائیکل اور آٹو پارٹس کی تیاری میں سب سے آگے ہے۔

اسی تقریب کے دوران خطاب کرتے ہوئے، ہونڈا موٹر کمپنی کے ایگزیکٹو نائب صدر اور سی او او شنجی اویاما نے کہا کہ موبلٹی انڈسٹری تیزی سے تبدیلی سے گزر رہی ہے اور "ہونڈا موٹر مستقبل کے لیے اچھی پوزیشن میں ہے”۔

اٹلس ہونڈا کے صدر اور سی ای او ثاقب ایچ شیرازی نے کہا کہ اٹلس ہونڈا نے اپنی پروڈکٹ لائن اپ کو بڑھایا ہے اور 95 فیصد تک لوکلائزیشن حاصل کر لی ہے۔

"کمپنی نے مقامی آٹو پارٹس مینوفیکچررز اور ڈیلرز کا سب سے بڑا نیٹ ورک تیار کیا۔ 10,000 سے زیادہ ٹچ پوائنٹس کے ساتھ، کمپنی نے 150,000 سے زیادہ لوگوں کے لیے براہ راست روزگار کے مواقع پیدا کیے ہیں،” شیرازی نے کہا۔

اٹلس ہونڈا لمیٹڈ نے مالی سال 2023-24 کی پہلی سہ ماہی میں اپنے خالص منافع میں 152 فیصد کا اضافہ رپورٹ کیا، جس کی وجہ فروخت اور دیگر آمدنی میں زبردست اضافہ ہے۔

موٹر سائیکل انڈسٹری، جو آبادی کے کم آمدنی والے طبقے کو پورا کرتی ہے، اکتوبر میں فروخت میں کمی کا سامنا کرنا پڑا۔

اکتوبر میں موٹرسائیکل کی فروخت میں ماہ بہ ماہ 5 فیصد اور سال بہ سال 11 فیصد کمی ہوئی۔

اٹلس ہونڈا، مارکیٹ لیڈر، نے 90,000 یونٹس کی فروخت ریکارڈ کی، جو ماہ بہ ماہ 5% اور سال بہ سال 5% کم ہے۔

مالی سال کے پہلے چار مہینوں میں موٹرسائیکل کی فروخت سال بہ سال 10 فیصد کم ہوکر 371,000 یونٹس ہوگئی، جس کی وجہ موٹر سائیکل کی قیمتوں میں اضافہ اور صارفین کی کم قوت خرید ہے۔

پاکستان میں ای وی بائیکس کے لیے چیلنجز

چارجنگ انفراسٹرکچر کا فقدان: EV بائک کی بڑھتی ہوئی مانگ کو پورا کرنے کے لیے پورے ملک میں اتنے چارجنگ اسٹیشن نہیں ہیں۔ حکومت کو چارجنگ انفراسٹرکچر میں سرمایہ کاری کرنے اور سرمایہ کاری کو راغب کرنے کے لیے نجی شعبے کے ساتھ مل کر کام کرنے کی ضرورت ہے۔

زیادہ قیمت اور کم رینج: EV بائک اب بھی ان روایتی بائک سے زیادہ مہنگی ہیں جو پیٹرول یا ڈیزل پر چلتی ہیں۔ بیٹریاں بھی مہنگی ہیں اور چارج ہونے میں کافی وقت لگتی ہیں۔ ای وی بائیکس کی رینج بھی محدود ہے، جس کا مطلب ہے کہ وہ ری چارج کیے بغیر لمبی دوری کا سفر نہیں کر سکتیں۔

کم آگاہی اور قبولیت: پاکستان میں بہت سے لوگ EV بائیکس کے فوائد اور ان کے ماحولیاتی اثرات سے واقف نہیں ہیں۔ حکومت کو صارفین کو آگاہ کرنے اور ای وی بائک کو اپنانے کو فروغ دینے کے لیے بیداری مہم چلانے کی ضرورت ہے۔

حکومت کی متضاد پالیسیاں: پاکستان میں ای وی پالیسی واضح اور مستقل نہیں ہے۔ مختلف قسم کی EVs اور مختلف شعبوں کے لیے مختلف ترغیبات اور ضوابط ہیں۔ پالیسی کو ٹیکس لگانے، معیاری بنانے، کوالٹی کنٹرول اور ای وی کی حفاظت کے مسائل کو بھی حل کرنے کی ضرورت ہے۔



Source link

About The Author

Leave a Reply

Scroll to Top