شہروں میں دھماکا خیز ہتھیاروں کا استعمال بند ہونا چاہیے۔ آراء

15 اپریل کو، ہمیں خبر ملی کہ سوڈان میں جنگ چھڑ گئی ہے۔ ہماری اسکرینوں سے، میرا خاندان، ہماری سوڈانی کمیونٹی، اور میں نے میڈیا آؤٹ لیٹس اور واٹس ایپ گروپس کی پیروی کی، جو بیرون ملک کیا ہو رہا ہے اس کی معلومات کے لیے بھوکے تھے۔

ہم نے دور سے دیکھا کہ سوڈانی مسلح افواج اور ریپڈ سپورٹ فورسز کے درمیان لڑائی خرطوم میں پھیل گئی، جس سے افراتفری پھیل گئی، اور ایک زمانے کے متحرک اور مانوس دارالحکومت کو تباہی کے راستے میں تبدیل کر دیا۔ ہم نے سوشل میڈیا پر گردش کرنے والی ویڈیوز دیکھی ہیں کہ خوفزدہ مسافر خرطوم کے بین الاقوامی ہوائی اڈے کے فرش پر گر رہے ہیں کیونکہ یہ شدید بمباری کی زد میں آیا تھا۔ ہم نے دیکھا کہ ڈاکٹروں کو اپنے مریضوں کو الشیدہ سلمیٰ ہسپتال سے اسٹریچرز اور بستروں پر بٹھا کر باہر لاتے ہوئے اس پر بمباری کی گئی۔ جیسا کہ ہم نے اپنی اسکرینوں پر تحلیل ہوتے دیکھا، ہم گھر واپس گھر والوں اور پیاروں سے ملنے کے لیے اپنے فون پر بھاگے۔

آٹھ ماہ بعد بھی ہم اپنے فون سے چپکے ہوئے ہیں کیونکہ خرطوم اور سوڈان کے دیگر حصے بمباری کی زد میں ہیں۔

دسمبر تک، لڑائی میں 12,000 سے زیادہ افراد ہلاک اور 6.7 ملین بے گھر ہوئے، جسے اقوام متحدہ کے انسانی ہمدردی کے سربراہ مارٹن گریفتھس نے "حالیہ تاریخ کے بدترین انسانی خوابوں میں سے ایک” قرار دیا ہے۔

میں نے اذیت میں دیکھا ہے کہ شہر جنگی علاقوں میں تبدیل ہو گئے ہیں اور "گھر” کی میری ذہنی تصویر راکٹوں، توپخانوں اور بموں کے نیچے گر گئی ہے۔ بہت سے دوسرے سوڈانی خاندانوں کی طرح، ہمیں مسلط فاصلے سے اپنے پیاروں کی موت پر سوگ منانا پڑا، بشمول حال ہی میں میرے دادا، جنہوں نے جنگ کی وجہ سے صحت کی دیکھ بھال تک رسائی کھو دی تھی۔

تنازعہ کے آغاز سے، دھماکہ خیز ہتھیاروں نے گھروں کو تباہ کر دیا ہے، بشمول میرے اپنے خاندان کے گھر، پورے محلے، اور انفراسٹرکچر، جیسے ہسپتال، اسکول، اور واٹر ٹریٹمنٹ پلانٹس۔ نومبر کے اوائل میں، اومدرمان اور خرطوم بہری کو ملانے والے یادگار شمبت پل پر بمباری کر کے تباہ کر دیا گیا۔ جنگ بندی جن سے شہریوں کو بمباری کے تحت شہروں کو خالی کرنے کی اجازت ملنی چاہیے تھی وہ بہت تیزی سے منہدم یا ختم ہو گئے ہیں، جس سے بمباری کی وجہ سے خطرناک حالات میں شہریوں کو ان کے گھروں تک پہنچا دیا گیا ہے۔

دھماکا خیز ہتھیاروں میں سطح سے فائر کیے جانے والے اور ہوا سے گرائے جانے والے ہتھیاروں اور دیگر گولہ بارود کی ایک رینج شامل ہوتی ہے، بشمول فضائی بم، توپ خانے اور مارٹر پروجیکٹائل، اور راکٹ اور میزائل۔ یہ ہتھیار اکثر بہت زیادہ غلط ہوتے ہیں، یا ان کے دھماکے کا رداس اتنا بڑا ہوتا ہے کہ ان کا استعمال غیر قانونی طور پر اندھا دھند نقصان پہنچائے بغیر آبادی والے علاقوں میں کیا جا سکے۔

سوڈان کی صورت حال اس بات کی صرف ایک مثال پیش کرتی ہے کہ جب شہروں میں دشمنی ہوتی ہے تو کیا ہوتا ہے۔ ہمارے پاس غزہ، شام اور یوکرین بھی ہیں جہاں ہم دیکھتے ہیں کہ دھماکہ خیز ہتھیاروں کا استعمال شہروں کو ناقابلِ رہائش بنا دیتا ہے۔

شام میں حالیہ گولہ باری اور ہوائی حملے ادلب اور حلب میں 120,000 سے زیادہ لوگ بے گھر ہوئے ہیں، جب کہ یوکرین میں، روسی افواج کے فضائی حملوں، راکٹ حملوں اور دیگر جنگی سازوسامان نے اہم بندرگاہوں اور اناج کی تنصیبات کو نشانہ بنایا ہے اور دیگر شہری انفراسٹرکچر کے علاوہ اسکولوں اور اسپتالوں کو بھی نقصان پہنچا ہے۔

اسرائیلی فوج کے وسیع پیمانے پر دھماکہ خیز ہتھیاروں کے استعمال نے غزہ کو اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل انتونیو گوٹیرس نے "بچوں کے قبرستان” میں تبدیل کر دیا ہے۔ کبھی گنجان آباد محلوں کے بڑے حصوں کو مکمل طور پر برابر کر دیا گیا ہے۔ فلسطینی مسلح گروپوں نے بھی اسرائیلی آبادی کے مراکز پر ہزاروں راکٹ فائر کیے ہیں۔

دھماکہ خیز ہتھیار نہ صرف شہریوں کو ہلاک اور زخمی کرتے ہیں بلکہ یہ بجلی کی لائنوں، پانی کی فراہمی اور دیگر ضروری انفراسٹرکچر کو بھی بڑے پیمانے پر نقصان پہنچاتے ہیں۔ اس نقصان کے نتیجے میں نام نہاد ریوربرٹنگ، یا دیرپا اثرات ہو سکتے ہیں جو آنے والی دہائیوں تک نقصان پہنچا سکتے ہیں۔ مزید برآں، جنگ کی نہ پھٹنے والی باقیات جنگ کے دوران اور بعد میں شہریوں کے لیے خطرہ ہیں اور مہاجرین اور بے گھر لوگوں کی محفوظ واپسی کو روکتی ہیں۔

اگرچہ مایوسی اور بربادی کا یہ منظر ناگزیر معلوم ہوتا ہے، اکیسویں صدی کی جنگ کی پیداوار، دھماکہ خیز ہتھیاروں کے استعمال کو کم کرنے کے لیے عالمی سطح پر کارروائی کے امکانات موجود ہیں۔

گزشتہ سال، 83 ممالک نے آبادی والے علاقوں میں دھماکہ خیز ہتھیاروں کے استعمال سے متعلق سیاسی اعلامیہ اپنایا، جس نے پہلی بار سرکاری طور پر اس مسئلے کو فوری اور براہ راست حل کرنے کی ضرورت کو تسلیم کیا۔ اعلامیہ حکومتوں اور ملٹریوں سے ایسی پالیسیاں اور مصروفیت کے قواعد کو اپنانے کا عہد کرتا ہے جو آبادی والے علاقوں میں شہریوں کو دھماکہ خیز ہتھیاروں کے استعمال سے بہتر طور پر تحفظ فراہم کرتی ہیں۔ یہ ان سے آبادی والے علاقوں میں بمباری اور گولہ باری کے خلاف نئے اصول اور معیار تیار کرنے کا بھی عہد کرتا ہے۔

بہت سے ممالک جن کے شہریوں کو مسلح تنازعات میں دھماکہ خیز ہتھیاروں کا سامنا کرنا پڑا ہے، نے اس اعلان کی توثیق کی، جیسے کمبوڈیا، وسطی افریقی جمہوریہ، اور فلسطین۔ اس پر فرانس، جنوبی کوریا، ترکی اور امریکہ سمیت دھماکہ خیز ہتھیاروں کے پروڈیوسروں اور برآمد کنندگان نے بھی دستخط کیے تھے۔ سوڈان نے آبادی والے علاقوں میں دھماکہ خیز ہتھیاروں سے ہونے والے نقصان کو تسلیم اور تسلیم کیا ہے، لیکن اس نے ابھی تک اس اعلان پر قومی حیثیت میں عمل کرنے کا عہد کرنا ہے۔

اگرچہ یہ اعلان قانونی طور پر پابند نہیں ہے، لیکن یہ مسلح تصادم کے دوران انسانی تکالیف کو روکنے کی کوششوں میں ایک بڑا قدم ہے۔ عام شہریوں کے تحفظ کے لیے اس اعلامیے کا موثر نفاذ اور انسانی بنیادوں پر تشریح انتہائی اہم اور ناگزیر ہے۔

مزید ریاستوں کو اعلامیہ پر دستخط کرنے اور میرے، سوڈانی عوام، اور جنگ کی زد میں آنے والے تمام خاندانوں کے ساتھ اظہار یکجہتی کرنے کی ضرورت ہے۔ ہمیں اس لمحے سے فائدہ اٹھانا چاہیے اور شہریوں پر دھماکہ خیز ہتھیاروں کے تباہ کن تعداد کو کم کرنے کے لیے اعلامیے کے اصولوں کو برقرار رکھنے کے لیے کام کرنا چاہیے۔

اس مضمون میں بیان کردہ خیالات مصنف کے اپنے ہیں اور یہ ضروری نہیں کہ الجزیرہ کے ادارتی موقف کی عکاسی کریں۔

About The Author

Leave a Reply

Scroll to Top