کانگو وائرس کے کیسز میں اضافے نے بلوچستان میں ہیلتھ ایمرجنسی کو جنم دیا۔


ڈینگی بخار میں مبتلا مریض 8 اکتوبر 2023 کو لاہور کے ایک ہسپتال میں زیر علاج ہیں۔ — آن لائن
ڈینگی بخار میں مبتلا مریض 8 اکتوبر 2023 کو لاہور کے ایک ہسپتال میں زیر علاج ہیں۔ — آن لائن

چونکہ مہلک کانگو وائرس کے کیسز میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے، اس بیماری سے نمٹنے کے لیے بلوچستان بھر کے ہسپتالوں میں ہیلتھ ایمرجنسی نافذ کر دی گئی ہے، جسے طبی اصطلاح میں کریمین کانگو ہیمرجک فیور (CCHF) وائرس بھی کہا جاتا ہے۔

ہیلتھ ایمرجنسی نافذ کرنے کا فیصلہ صوبائی دارالحکومت کوئٹہ میں نگراں وزیراعلیٰ بلوچستان علی مردان ڈومکی کی زیر صدارت اجلاس کے بعد کیا گیا، جس میں بلوچستان میں وائرس کے 44 کیسز رپورٹ ہوئے۔

تمام ڈویژنل کمشنرز، ڈسٹرکٹ ہاؤس آفیسرز (ڈی ایچ اوز) اور لائیو اسٹاک افسران کو وزیراعلیٰ نے صورتحال پر گہری نظر رکھنے کی ہدایت کی ہے۔

اجلاس میں دفعہ 144 کے تحت کوئٹہ میں پرائیویٹ مذبح خانوں پر دو ہفتوں کے لیے پابندی عائد کرنے کا فیصلہ کیا گیا جس کے بعد صرف شہری آبادی سے دور واقع مذبح خانوں میں جانور ذبح کیے جا سکیں گے۔

وزیراعلیٰ ڈومکی نے صوبائی محکمہ لائیو سٹاک کو ہدایت کی کہ مویشی منڈیوں میں فوری طور پر جراثیم کش اسپرے کریں۔

نگراں وزیر اعلیٰ کے مطابق ابتدائی شواہد میں بتایا گیا کہ سول اسپتال میں ہرنائی سے تعلق رکھنے والے مریض سے وائرس پھیلا، جس کے بعد متاثرہ وارڈ کو سیل کر دیا گیا اور دیگر شعبوں کو خصوصی اقدامات کے تحت ڈس انفیکٹ کیا گیا۔

عبوری وزیراعلیٰ نے مزید کہا کہ کانگو وائرس سے متاثر ہونے والے دو ہیلتھ کیئر ورکرز کو آج ایئر ایمبولینس کے ذریعے کراچی منتقل کیا جا رہا ہے۔

بلوچستان میں عبوری سیٹ اپ نے کانگو وائرس سے جاں بحق ہونے والے ڈاکٹر کو شہید قرار دیتے ہوئے ان کے لواحقین کے لیے مراعات کا اعلان کیا ہے۔

واضح رہے کہ کوئٹہ میں مہلک کانگو وائرس کی تشخیص کرنے والا ڈاکٹر اور فاطمہ جناح اسپتال میں زیر علاج مشتبہ مریض اتوار کو دم توڑ گیا تھا۔

اسپتال انتظامیہ کے مطابق مریض کو ہزارہ گنج کے دیہی علاقے سے تشویشناک حالت میں اسپتال لایا گیا تھا۔

نوجوان ڈاکٹروں کے ترجمان کے مطابق، زخمی ڈاکٹر کی موت علاج کے لیے کراچی لے جانے کے دوران ہوئی۔ نوجوان ڈاکٹروں کے ترجمان کے مطابق، مریض کی جان اس وقت چلی گئی جب وہ خصوصی طبی علاج کے لیے کراچی جاتے تھے۔

اس سال کانگو وائرس کے کیسز میں اضافہ دیکھا گیا ہے اور کم از کم 41 مریض ہسپتال میں داخل ہوئے ہیں، جس کے نتیجے میں 17 اموات ہوئیں۔



Source link

About The Author

Leave a Reply

Scroll to Top