کیا ہم کبھی عالمی بھوک کو ختم کر سکتے ہیں؟ | بھوک

نیا اپنے 8 بلین لوگوں کو کھانا کھلانے کے لیے کافی خوراک پیدا کرتی ہے، پھر بھی لاکھوں لوگ روزانہ بھوکے رہتے ہیں۔

دنیا بھر میں پیدا ہونے والی خوراک کی کوئی کمی نہیں ہے۔ اس کے باوجود، 2022 میں 735 ملین سے زیادہ لوگوں کو دائمی بھوک کا سامنا کرنا پڑا۔

اقوام متحدہ نے زندگیوں اور معاش کو بچانے کے لیے فوری انسانی بنیادوں پر کارروائی کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ اس نے خبردار کیا ہے کہ 2030 تک بھوک کے خاتمے کا ہدف حاصل نہیں ہو سکتا۔

افریقہ بھر کی کمیونٹیز کو بھی چار دہائیوں میں خوراک کے بدترین بحران کا سامنا ہے۔ لیکن خوراک کے عدم تحفظ سے نمٹنے کے لیے امدادی پروگراموں کی مالی اعانت کم ہو رہی ہے۔

تو، اگر دنیا کے پاس اپنے لوگوں کو کھانا کھلانے کے لیے کافی ہے، تو بہت سی قومیں غذائی عدم تحفظ اور بھوک کا شکار کیوں ہیں؟

About The Author

Leave a Reply

Scroll to Top